اردوئے معلیٰ

Search

سرکارِ دو جہاں کا نواسہ حسین ہے

بابِ اثر پہ ایک دعا سا حسین ہے

 

تقسیم کر رہے ہیں جو کوثر کے جام وہ

کیسے کہے گا کوئی کہ پیاسا حسین ہے

 

جو نفسِ مطمئنہ کی تصویرِ عین ہے

اسرارِ حق سے خوب شناسا حسین ہے

 

قربانیٔ حسین ہے بنیادِ لا الہ

دینِ محمدی کا اثاثہ حسین ہے

 

کرتے ہیں عاصیوں کی جو امداد ہر گھڑی

بے چارگی میں سب کی ہی آسا حسین ہے

 

تسکین ان کی یاد سے ملتی ہے ناز کو

ہر آن زندگی میں دلاسہ حسین ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ