اردوئے معلیٰ

Search

سر تا بہ قدم ہیں نور فقط دیدار کی حرمت کیا کہنے

جب زُلف گھنیری چھاؤں ہے رخسار کی رنگت کیا کہنے

 

بکتے ہوں جہاں بے دام سبھی سلطان و گدا، سر مستی میں

اس کون و مکاں کے سلطاں کے بازار کی ثروت کیا کہنے

 

یہ سچ ہے کہ روزے داروں کو اللہ جزا خود ہی دے گا

پر شہرِ نبی میں روزے کے افطار کی لذّت کیا کہنے

 

جب چاند بھی تھک کر سو جائے اور ہجر بہے اِن آنکھوں سے

اس جذب میں نامِ نامی کی تکرار کی شدت کیا کہنے

 

سینتیس برس ہونے کو ہیں چشمان ہیں میری دید بہ کف

جس دم وہ کرم فرمائیں گے بیمار کی حالت کیا کہنے

 

جس جا ہے نظر اس جا ہے قدم، یہ فیض ہے اُن سے نسبت کا

اُن کے برّاق و رف رف کی رفتار کی شدت کیا کہنے

 

گر بہرِ کرم منظر میرے گھر شاہِ مدینہ آ جائیں

کیف و مستی میں گھر کے در و دیوار کی رقت کیا کہنے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ