اردوئے معلیٰ

Search

سر جُھکا لو احمدِ مختار کا ہے تذکِرہ

غم کے مارو مُونِس و غمخوار کا ہے تذکِرہ

 

رِفعتیں بخشی ہیں مولیٰ نے نبی کے ذکر کو

ہر زباں ہر دور میں سرکار کا ہے تذکرہ

 

عندلیبانِ چمن ہیں آج محوِ اِلتِفات

رب کے پیارے کی حسیِں گُفتار کا ہے تذکرہ

 

مُنہ چُھپاتے ہیں مہ و خورشید بھی اب چرخ پر

قُدسیوں میں شاہ کے رُخسار کا ہے تذکِرہ

 

عاشقو! تکرارِ والیلِ اِذا یغشیٰ رہے

مصطفیٰ کے گیسوئے خمدار کا ہے تذکرہ

 

زعفران و صندل و مُشکِ خُتن کو چھوڑئیے

گیسوئے سرکار کی مہکار کا ہے تذکرہ

 

ناسِخِ ادیان ہیں وہ نعمتیں اُن پر تمام

حشر تک اب سیدِ ابرار کا ہے تذکرہ

 

گرچہ ہیں مشہور یاری میں تو محمود و ایاز

دِل نشیں صدیق یارِ غار کا ہے تذکرہ

 

بابِ خیبر کو اُکھاڑا آپ نے کِس شان سے

آج زورِ حیدرِ کرّار کا ہے تذکرہ

 

کردو اے مرزا سُخن کا بس یہیں پر اختِتام

حضرتِ حسّان کے اشعار کا ہے تذکرہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ