اردوئے معلیٰ

سر ہم نے کٹا کر بھی رکھی لاج وفا کی

سر ہم نے کٹا کر بھی رکھی لاج وفا کی

بیداد گرو دادِ وفا کیوں نہیں دیتے

رکھو گے کٙشاکش یہ شب و روز میں کب تک

تم اپنی انا ہی کو مٹا کیوں نہیں دیتے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ