اردوئے معلیٰ

سعادت یہ خیر اُلبشر دیجئے

سعادت یہ خیر اُلبشر دیجئے

اُجالوں سے دامن کو بھر دیجئے

 

مری برق پائی کو ہے انتظار

مجھے آپ اِذنِ سفر دیجئے

 

طلب گارِ دیدار ہوں یا نبی

جھلک اک شہِ بحر و بر دیجئے

 

ہمیشہ ثناء گوئی کرتا رہوں

مجھے مدحتوں کا ہنر دیجئے

 

’’مواجہ‘‘ پہ روزانہ ہو حاضری

مدینے کے شام و سحر دیجئے

 

کروں آپ کی نذر اشکِ رواں

مجھے سوزِ دل، چشمِ تر دیجئے

 

سرِ ناز اشفاقؔ ہے مضطرب

جھکانے کو سر ، سنگِ در دیجئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ