’’سنو گے ’لا‘ نہ زبانِ کریم سے نوریؔ ‘‘

 

’’سنو گے ’لا‘ نہ زبانِ کریم سے نوریؔ ‘‘

ملیں گی نعمتیں ساری، قسیم سے نوریؔ

یہی تو رب کے خزانے لُٹانے آئے ہیں

’’یہ فیض و جود کے دریا بہانے آئے ہیں ‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ