سنگِ اسود میں بسی ہے خوشبوئے بوسہ تری

 

سنگِ اسود میں بسی ہے خوشبوئے بوسہ تری

اے مہِ کوہِ صفا کیا شان ہے بالا تری

 

لمسِ لب ہائے مبارک سے بڑھی شانِ حجر

رشکِ سنگِ خلد ہے وہ بن کے بوسہ گہ تری

 

اس دیارِ رنگ و نکہت میں کھڑا ہوں دم بخود

ہے جہاں جائے ولادت اے شہِ والا تری

 

ماورائے فہم ہیں اس شہر کی رعنائیاں

خوشبوئے نقشِ کفِ پا ہے یہاں ہر جا تری

 

عشق کے اصرار پر میزاب کا ہوں مقتدی

مرکزِ چشمِ رواں لیکن ہے خاکِ پا تری

 

کعبے کی آنکھوں سے بھی طیبہ ہی دکھتا ہے مجھے

کعبے کا کعبہ ہے وہ ہی جو ہے جلوہ گہ تری

 

منظرؔ محشر میں ہر سو نفسی نفسی ہے بپا

باعثِ تسکیں ہے آمد سیدِ ذی جہ تری

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ