اردوئے معلیٰ

سو بسو تذکرے اے میرِ امم تیرے ہیں​

 

سو بسو تذکرے اے میرِ امم تیرے ہیں​

اوجِ قوسین پہ ضَو ریز عَلَم تیرے ہیں​

 

وقت اور فاصلے کو بھی تری رحمت ہے محیط​

سب زمانے ترے، موجود و عدم تیرے ہیں​

 

جیسے تارے ہوں سرِ کاہکشاں جلوہ فشاں​

عرصۂ زیست میں یوں نقشِ قدم تیرے ہیں​

 

اہلِ فتنہ کا تعلّق نہیں تجھ سے کوئی​

قافلے خیر کے اے خیر شیم تیرے ہیں​

 

ہیں تری ذات پہ سو ناز گنہگاروں کو​

کیسے بے ساختہ کہتے ہیں کہ ہم تیرے ہیں​

 

ہم کو مطلوب نہیں مال و منالِ ہستی​

ہم طلبگار فقط تیری قسم تیرے ہیں​

 

ناز بردارئ دنیا کی مشقّت میں نہ ڈال​

ہم کہ پروردۂ صد ناز و نعم تیرے ہیں​

 

ان کی خوشبو سے مہک جائے مشامِ عالم​

میرے دامن میں جو گلہائے کرم تیرے ہیں​

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ