اردوئے معلیٰ

Search

سُتوں کی دیکھ کر حالت صحابہ سر بسر روئے

تمامی حاضرانِ مجلسِ خیر البشر روئے

 

رُلائے جب کہ چوبِ خشک کو حضرت کی مہجوری

کہو پھر عین غیرت سے نہ کیوں کر ہر بشر روئے

 

سنی جب اس ستونِ عاشقِ بے تاب کی زاری

رسول اللہ کے اصحاب کہیے ، کس قدر روئے

 

کوئی ایسا نہ تھا اس بزم میں جس پر نہ تھی رقت

بہت روئے ، نپٹ روئے ، تمامی بیشتر روئے

 

پھرا جاتا ہے آنکھوں میں وہ عالم ان کے رونے کا

کہ کس کس طرح سے اصحاب باسوزِ جگر روئے

 

ادھر گرمِ فغاں تھا وہ ستوں صدمہ سے فرقت کے

ادھر یہ شدتِ رقت سے باصد چشمِ تر روئے

 

ستوں خاموش ہوتا تھا ، نہ یہ رونے سے چپکے تھے

وہ آہیں مار چلایا ، یہ دل کو کھول کر روئے

 

ستوں نے یہ کیے نالے کہ چشمِ حال سے اس دم

شجر روئے ، حجر روئے ، سبھی دیوار و در روئے

 

رسول اللہ کی الفت محبو! عینِ ایماں ہے

فراقِ مصطفی میں اہلِ ایماں عمر بھر روئے

 

تصور آگیا رونے میں جب لمعانِ دنداں کا

تو مشتاقانِ دندانِ نبی سلکِ گہر روئے

 

لبِ لعل مبارک کے جو مشتاقِ زیارت تھے

بجائے اشک عینِ شوق سے لختِ جگر روئے

 

بشکل ابر اے کافی یہ مہجوروں کا عالم ہے

یہاں روئے ، وہاں روئے ، اِدھر روئے ، اُدھر روئے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ