اردوئے معلیٰ

Search

سینہِ پر غم میں چاہت کا نشاں ہے دل کہاں ہے

یہ خطیبِ عشقِ جانِ دو جہاں ہے ، دل کہاں ہے

 

میری آنکھوں نے ابھی دیکھا ہی تھا روضہ ترا

دھڑکنیں کہنے لگیں مجھ سے کہاں دل کہاں ہے

 

باہر آئے اپنی سوچوں سے قدم بوسی کرے

بے حجاب اک پیکرِ رشکِ جِناں ہے دل کہاں ہے ؟

 

دل ہے گم تعظیمِ نقشِ پا میں اور سینے میں یہ

زندگی کی اِک دلیلِ ناتواں ہے ، دل کہاں ہے

 

میں تلاشِ دل میں سوئے شہرِ طیبہ چل پڑا

پیچھے پیچھے سارا حسنِ کہکشاں ہے دل کہاں ہے ؟

 

جب سے وہ گزرے خیالوں سے تبھی سے جسم میں

خوشبوؤں کا ایک بحرِ بے کراں ہے ، دل کہاں ہے

 

میں تبسم اپنے پہلو پر فدا سو جان سے

اِس میں اِک شیریں تبسم ضوفشاں ہے ، دل کہاں ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ