اردوئے معلیٰ

سیّدِ والا ! رسولِ مہرباں!

کیجئے وا بابِ لطفِ جاوداں

 

تابشِ افلاک ، توقیرِ زمیں

ہیں وہ روحِ عصر روحِ ہر زماں

 

کس کا لمسِ روحِ پرور مل گیا؟

سنگریزو ! مل گئی کیسے زباں

 

میرے آقا صاحبِ خلقِ عظیم

اور تم ننگِ مروت بے گماں

 

المدد اے دافعِ رنج و بلا

دور ساحل ، اور گم ہے بادباں

 

کوئے دل ان کے لیے ہے فرش راہ

اور انہیں کی منتظر محرابِ جاں

 

ہو تکلم ہر گھڑی محوِ درود

میرا ہر تار نفس ہو نعت خواں

 

آنکھ میری رشکِ صد مہتاب ہو

آپکا جلوا اگر ہو ضوفشاں

 

سرورِ عالم کے آگے ہر عروج

سر نگوں ، لاچار ، عاجز ، ناتواں

 

دیجیے پھر حکم ابرِ لطف کو

خشک ہیں آقا دلوں کی کھیتیاں

 

سرورِ دیں کا دیارِ بے مثال

اے صدف ہے زینتِ باغِ جناں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات