اردوئے معلیٰ

Search

سیّدِ والا کا رُتبہ ہے عظیم

اُن کا پیارا پیارا روضہ ہے عظیم

 

خود ہی نقّاشِ ازل نے کہہ دیا

میرے پیارے تیرا نقشہ ہے عظیم

 

رحمۃ للعالمیں کا شہر ہے

اس لیے شہرِ مدینہ ہے عظیم

 

مصطفیٰ آرام فرما ہیں جہاں

اُس زمیں کا چپہ چپہ ہے عظیم

 

سر سے پا تک نور کا ہے سلسلہ

با خدا آقا کا ُحلیہ ہے عظیم

 

حشر میں جس کی شفاعت وہ کریں

ربِّ اکبر کا وہ بندہ ہے عظیم

 

جس مہینے اور جس دن آئے آپ

وہ مہینہ وہ دوشنبہ ہے عظیم

 

عظمتِ مکّہ مسلّم ہے مگر

مصطفیٰ کا بھی مدینہ ہے عظیم

 

نعت جو خاکیؔ ہوئی مجھ کو عطا

اس کا ایک اِک لفظ و مصرع ہے عظیم

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ