اردوئے معلیٰ

شاخِ نخلِ یقیں درود شریف

شاخِ نخلِ یقیں درود شریف

جانِ گلزارِ دیں درود شریف

 

جرم و عصیاں مٹا کے کرتا ہے

ہر نفَس صندلیں درود شریف

 

بخشتا ہے شبِ توہم کو

ایک صبحِ یقیں درود شریف

 

حبِ سرکار کے تقاضوں میں

شرط ہے اولیں درود شریف

 

سیلِ آلام کیا بگاڑے گا

ہے مکانِ حصیں درود شریف

 

بلبل و گل پہ وجد طاری ہو

جب پڑھے یاسمیں درود شریف

 

قافلے نوریوں کے اترے ہیں

لے کے نذرِ حسیں درود شریف

 

باقی اوراد سب ستارے ہیں

اور ماہِ مبیں درود شریف

 

عشق سرکار اک حسیں پیکر

ہے قبا مخملیں درود شریف

 

ہر گھڑی پڑھ رہے ہیں حور و ملک

بر شہہِ مرسلیں درود شریف

 

اے صدف!! موجِ نور کی صورت

دل میں ہے جاگزیں درود شریف

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ