شافعِ روزِ جزا نورِ ہدیٰ ماہِ عرب

شافعِ روزِ جزا نورِ ہدیٰ ماہِ عرب

بالیقیں ہیں آپ شاہِ انبیا ماہِ عرب

 

قبر میں کنت تقولوا جب کہیں منکر نکیر

اس گھڑی ہونٹوں پہ ہو صل علی ماہِ عرب

 

گو نہیں زادِ سفر لیکن گزارش ہے یہ ہی

اذن طیبہ کا مجھے کردے عطا ماہِ عرب

 

تذکرہ کرتا رہوں ہر وقت شہرِ نور کا

زیست کا مقصود ہے طیبہ ترا ماہِ عرب

 

طوق خواجہ کی غلامی کا رہے زیبِ گلو

میں رہوں تیرے گداؤں کا گدا، ماہِ عرب

 

روز دل میں یادِ طیبہ لے کے سوجاتا ہوں میں

بہر رحمت ہی کبھی خوابوں میں آ، ماہِ عرب

 

گنبدِ خضریٰ تصور میں لئے بیٹھا رہوں

اور مری آنکھیں رہیں محوِ لقا ماہِ عرب

 

عشق و الفت کا تقاضہ ہے کہ تیرا ذکرِ پاک

ہوبیاں لب سے مرے صبح و مسا ماہِ عرب

 

تیری پیزاروں سے مس ہو کے فروزاں جو ہوئی

کاش مل جائے وہی خاکِ شفا ماہِ عرب

 

جب ہو منظرؔ قادری کے سامنے روضہ ترا

بس اِسی لمحے اُسے آئے قضا ماہِ عرب

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ