اردوئے معلیٰ

Search

شافعِ محشر کا واصف جو یہاں ہو جائے گا

ان شاءاللہ حشر میں بھی نعت خواں ہو جائے گا

 

ہے مرورِ مصطفیٰ کی یہ بھی اِک ادنٰی شناخت

ذرّہ ذرّہ راہ کا عنبر فشاں ہو جائے گا

 

ضربِ حق سے راہ پر لا ! نفس کو ورنہ یہ طِفْل

شُرب شِیرِ جرم و عصیاں پرجواں ہو جائے گا

 

بخششِ رب اہلِ عِصیاں کو لگائے گی گَلے

ان کی جانب جب شفیعِ عاصیاں ہو جائے گا

 

آیۂ خَیرٌ مِّنَ الْاُوْلٰی ہے شاہد ،تیرا ذکر

تب بھی ہوگا جب فنا فانی جہاں ہو جائے گا

 

اے معظمؔ ! قامتِ احمد کے جو مدّاح ہیں

ان کا قد اونچا میانِ شاعراں ہو جائے گا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ