اردوئے معلیٰ

شاہا! سُخن کو نکہتِ کوئے جناں میں رکھ

اپنے کرم کے ہالۂ عنبر فشاں میں رکھ

 

ویسے تو حُسن زار ہیں حیرت گہِ طلب

لیکن ہمیں محلۂ قُدسی نشاں میں رکھ

 

ڈھلتی شفق میں کھِلتے ہیں کچھ خوابِ انگبیں

صبحِ عیاں کو لذتِ شامِ نہاں میں رکھ

 

صدیوں سے شہر شہر کی ہجرت سے تھک گیا

اب مجھ کو قربِ سنگِ درِ آستاں میں رکھ

 

تیری ثنا کے شوق میں ہی عمر بھر رہوں

یہ نسبتِ نیاز مرے قلب و جاں میں رکھ

 

مجھ کو بھی اپنے مطلعِ طلعت کی بھیک دے

مجھ کو بھی اپنی جلوہ گہِ بیکراں میں رکھ

 

حاشا، بکھر ہی جائے نہ یہ حرفِ نارسا

اِس کو ثنا کے دامنِ حفظ و اماں میں رکھ

 

بے کیف موسموں کو عطا کر لطافتیں

بے نام حدتوں کا سماں سائباں میں رکھ

 

مَیں شعر باندھتا ہُوں، اسے اوجِ نعت دے

مَیں حرف جوڑتا ہوں انہیں کہکشاں میں رکھ

 

خاکِ طلب کو فیض گہِ آستاں مِلے

خارِ خزاں کو نقش گہِ گُلستاں میں رکھ

 

مقصودؔ اُس حسیب سے بخشش کے واسطے

آقا کا اسمِ نور سدا درمیاں میں رکھ

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات