اردوئے معلیٰ

Search

شبِ معراج ہے کیا کچھ لُٹایا جا رہا ہے

سفر کا ایک اِک رستہ سجایا جا رہا ہے

 

تمہاری شان کے صدقے امامِ قدسیاں سے

قدم بوسی کراکے پھر جگایا جا رہا ہے

 

صفیں سیدھی ملائک کررہے ہیں بہرِ عزت

پروں کا فرش بھی اب تو بچھایا جا رہا ہے

 

خُدا کے حکم سے نبضِ زمانہ رُک چکی ہے

مکاں سے لامکاں تک اُن کو لایا جا رہا ہے

 

رُسل کو انبیاء کو قدسیوں کو عالمیں کو

تری توقیر کا جلوہ کرایا جا رہا ہے

 

کھلے گی نُورِ آقا کی حقیقت آج کی شب

یہ جبریلِؑ امیں کو بھی بتایا جا رہا ہے

 

درودوں والے آقا آج گزریں گے اِدھر سے

یہ مژدہ عرشیوں کو بھی سنایا جا رہا ہے

 

نبی کی شانِ محبوبی پہ ہرعظمت فدا ہے

کہ قربِ ذات میں اب تو بلایا جا رہا ہے

 

بڑے ہی ناز میں ہے کبریائی تیری خاطر

ازل کے راز سے پردہ ہٹایا جا رہا ہے

 

شکیلؔ اُن کو خدا نے کیوں بھلا لوٹا دیا ہے

سنا ہے اِس جہاں کو پھر بسایا جا رہا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ