شــیوہ عـــفو ہــو ، پیـــمانہ سالاری ہـــو

 

شــیوہ عـــفو ہــو ، پیـــمانہ سالاری ہـــو

پڑھ یہ سنت، کہ تری فکر میں بیداری ہـــو

 

خطبہ خیــر کو تفصیل سے، ترتیــل سے پڑھ

تاکہ وجــدان میں وجدان سی سرشاری ہـــو

 

لطــف تو تــب ہے کہ ہــر آن براہیمــی درود

آنکھ کی روح سے زمزم کی طرح جاری ہـــو

 

کون ہے میرے محــمد کے علاوہ جس کی

ذات بے مثــل ہو اور بات بھی معــیاری ہـــو

 

پیٹ پر باندھے وہ پتھــر سے کہاں عشق کرے

جــس کو دنیا کے وســائل کی طلب گاری ہـــو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

جیسے چُھپ جاتی ہے تیرہ شب سحر کے سامنے
کرم کے بادل برس رہے ہیں
اے خوشا آندم کہ گردم مست بایت یا رسول
ہجر تیرا مجھر اچھا نہیں ہونے دے گا
چراغ ِ عشق جلا ہے ہمارے سینے میں
جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں
اے شہ انس و جاں جمال جمیل
گو ترقی پہ جمالِ مہِ کامل ہووے
حق نے تجھ کو بادشاہ ِ انس و جاں پیدا کیا
اصحاب یوں ہیں شاہِ رسولاں کے اردگرد

اشتہارات