شــیوہ عـــفو ہــو ، پیـــمانہ سالاری ہـــو

 

شــیوہ عـــفو ہــو ، پیـــمانہ سالاری ہـــو

پڑھ یہ سنت، کہ تری فکر میں بیداری ہـــو

 

خطبہ خیــر کو تفصیل سے، ترتیــل سے پڑھ

تاکہ وجــدان میں وجدان سی سرشاری ہـــو

 

لطــف تو تــب ہے کہ ہــر آن براہیمــی درود

آنکھ کی روح سے زمزم کی طرح جاری ہـــو

 

کون ہے میرے محــمد کے علاوہ جس کی

ذات بے مثــل ہو اور بات بھی معــیاری ہـــو

 

پیٹ پر باندھے وہ پتھــر سے کہاں عشق کرے

جــس کو دنیا کے وســائل کی طلب گاری ہـــو

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ