اردوئے معلیٰ

شمس زبیری کا یومِ وفات

آج ممتاز شاعر ، صحافی اور جریدہ "نقش” کے مدیر شمس زبیری کی برسی ہے۔

شمس زبیری 1917ء میں پیدا ہوئے تھے۔ قیام پاکستان کے بعد انہوں نے ریڈیو سے وابستگی اختیار کی اور مصلح زبان کے فرائض انجام دیتے رہے اسی دوران انہوں نے ایک ادبی جریدہ نقش جاری کیا جو اپنے زمانے کا ایک بڑا مقبول ادبی جریدہ تھا۔ یہ جریدہ دیگر ادبی رسائل میں چھپنے والی مقبول ترین اور بہترین اصناف ادب کاانتخاب یکجا کرکے پیش کرتا تھا اور یوں اس کے ذریعہ قاری کو ایک ہی جریدے کے ذریعے تمام ادبی جریدوں میں شائع ہونے والا بہترین ادب ایک ہی جگہ پڑھنے کو مل جاتا تھا۔
3 ستمبر 1999ء کو ممتاز شاعر اور صحافی شمس زبیری قادر آباد حجرہ شاہ مقیم اوکاڑہ میں وفات پاگئے اور وہیں آسودۂ خاک ہوئے۔
اکبر روڈ پر واقع شمس زبیری کے ادارے ’’کاشانۂ اردو‘‘ سے بچوں کا پرچہ ’’میرا رسالہ‘‘ اور ادبی جراید کے انتخاب پر مبنی ’’نقش‘‘ نکلا کرتا تھا۔
عبیداللہ بیگ صاحب کا نام پہلے حبیب اللہ بیگ تھا اور وہ اسی نام سے بچوں کے رسالے ” میرا رسالہ ” میں لکھا کرتے تھے۔ اُس زمانے میں ایک ماہانہ ادبی رسالہ ” نقش ” کے نام سے شایع ہوتا تھا جو ہر ماہ ادبی رسالوں سے انتخاب پیش کرتا تھا۔شمس زبیری صاحب اس کے ایڈیٹر تھے۔ اسی ادارے سے بچوں کے لئے ماہنامہ ” میرا رسالہ ” شایع ہوتا تھا حبیب اللہ بیگ صاحب اس میں کہانیاں لکھا کرتے تھے۔
۔۔۔۔۔۔۔
منتخب کلام
۔۔۔۔۔۔۔

 

کبھی آتشِ غمِ عشق تھی کبھی آتشِ غمِ زندگی

مرے دل میں آگ لگی رہی کٹی عمر سوز و گداز میں

۔۔۔۔۔۔۔

سودا وہ سما گیا ہے سر میں جچتا ہی نہیں کوئی نظر میں

پہچان رہا ہوں دشمنوں کو کچھ دوست بھی ہیں مری نظر میں

۔۔۔۔۔۔۔

ہم اور ڈریں بادِ مخالف سے غلط ہے

ہم گردشِ دوراں سے کئی بار لڑے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔

کچھ اس طرح وہ نگاہیں چراۓ جاتے ہیں

کہ اور بھی مرے نزدیک آۓ جاتے ہیں

اس التفات گریزاں کو نام کیا دیجیے

جواب دیتے نہیں مسکراۓ جاتے ہیں

نگاہ لطف سے دیکھو نہ اہل دل کی طرف

دلوں کے راز زبانوں پہ آۓ جاتے ہیں

وہ جن سے ترک تعلق کو اک زمانہ ہوا

نہ جانے آج وہ کیوں یاد آۓ جاتے ہیں

تمہاری بزم کی کچھ اور بات ہے ورنہ

ہم ایسے لوگ کہیں بن بلاۓ جاتے ہیں

یہ دل کے زخم بھی کتنے عجیب ہیں اے شمسؔ

بہار ہو کہ خزاں مسکراۓ جاتے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ