اردوئے معلیٰ

شوقِ دل کا وفور کیا کہیے

لب پہ نعتِ حضور کیا کہیے

 

باعثِ ہر ظہور کیا کہیے

ذاتِ پاکِ حضور کیا کہیے

 

اک سراپائے نور کیا کہیے

قامتِ آں حضور کیا کہیے

 

عالمِ کیف و نور کیا کہیے

سرو قدِ حضور کیا کہیے

 

چاند کا ماند نور کیا کہیے

چہرۂ آں حضور کیا کہیے

 

نور و تفسیرِ نور کیا کہیے

سیرتِ آں حضور کیا کہیے

 

روشنی دور دور کیا کہیے

نقشِ پائے حضور کیا کہیے

 

باعثِ صد سرور کیا کہیے

ذکرِ پاکِ حضور کیا کہیے

 

طور یا رشکِ طور کیا کہیے

روضۂ آں حضور کیا کہیے

 

مخرجِ سیلِ نور کیا کہیے

گنبدِ آں حضور کیا کہیے

 

لطفِ جامِ طہور کیا کہیے

صدقۂ آں حضور کیا کہیے

 

خم سرِ پُر غرور کیا کہیے

بر درِ آں حضور کیا کہیے

 

جس کو حورانِ خلد بھی ترسیں

وہ جمالِ حضور کیا کہیے

 

دو کمانیں ملی ہیں آپس میں

ابروئے آں حضور کیا کہیے

 

اس پہ لیلائے شب تصدق ہے

گیسوئے آں حضور کیا کہیے

 

کیف زا دل نشین و جاں پرور

ہر ادائے حضور کیا کہیے

 

کون پہنچا ہے عرشِ اعظم پر

ما سوائے حضور کیا کہیے

 

یار ان کے ہزارہا لیکن

یارِ غارِ حضور کیا کہیے

 

مرحبا ہے محیطِ دو عالم

سایۂ آں حضور کیا کہیے

 

اب مدینہ بلائیے شاہا

ہے نظرؔ نا صبور کیا کہیے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات