شوق کا پیغام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

شوق کا پیغام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

میم سے اک نام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

رحمتِ باری تعالٰی اس لیے ہے سر بہ سر

اسمِ حسنِ تام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

حسنِ عالم سرنگوں کیوں کر نہ ہو اس ہاتھ سے

نامِ خوش آرام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

من گداے چار یارم تابعِ آلِ نبی

یہ بصد اکرام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

صدقۂ آلِ محمد میں ملا ہے کارِ نعت

کتنا اچھا کام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

وہ مطافِ دو جہاں ہیں، قبلۂ کونین ہیں

باندھ کر احرام ، لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

عشق کے اصرار کی تقلید میں نامِ رسول

صبح لکھا شام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

بندۂ مہجور کو اذنِ مدینہ مل گیا

یہ مرا انعام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

 

منظرِ عاصی کو ہو کیوں وحشتِ وقتِ رواں

دافعِ آلام لکھا ہے سرِ لوحِ سخن

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ