اردوئے معلیٰ

شگفتہ ہے گُلِ امکانِ رحمت

شگفتہ ہے گُلِ امکانِ رحمت

تعلق آپ سے ہے جانِ رحمت

 

سدا سر سبز ہیں گُلہائے مدحت

مہکتا ہے سدا گُلدانِ رحمت

 

بروزِ حشر اُن کے اُمتی کا

سہارا ہے ، فقط پیمانِ رحمت

 

اسی در سے ملا ہے عارفوں کو

شعورِ زندگی ، عرفانِ رحمت

 

گروہِ انبیاء میں منفرد ہے

تری شانِ شفاعت ، شانِ رحمت

 

ترا دستِ سخا ، جانِ سخاوت

تری چشمِ عطا ، ایمانِ رحمت

 

مرا شوقِ سخن میرا اثاثہ

تری مدح و ثنا ، عُنوانِ رحمت

 

مرے سب عیب چُھپ جاتے ہیں اخترؔ

خوشا! یہ وُسعتِ دامانِ رحمت

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ