شہزاد احمد اور سید فخرالدین بلے کی نصف صدی پر محیط داستانِ رفاقت

سید فخرالدین بلے اور شہزاد احمد کی نصف صدی پر محیط داستانِ رفاقت(ولادت:۔ 16۔اپریل 1932. امرتسر)
(وفات:۔یکم۔اگست 2012. لاہور)
——
شہزاد احمد نے 16 اپریل 1932کو مشرقی پنجاب کے مشہور تجارتی اور ادبی شہر امرتسر کے ایک ممتاز خاندان کے فرد ڈاکٹرحافظ بشیر کے گھرانے میں جنم لیا، گورنمنٹ کالج لاہور سے 1952ءمیں نفسیات اور 1955ء میں فلسفے میں پوسٹ گریجوایشن کی اور تعلیم و تدریس سے وابستہ ہوگئے۔ ’’صدف‘‘ 1958ء میں ان کی غزلوں کا پہلا مجموعہ ہے۔ ان کی غزلوں کے مجموعے ’’جلتی بھجتی آنکھیں‘‘ 1969ء پر آدم جی ادبی انعام دیا گیا۔ ’’پیشانی میں سورج’‘ پر انہیں ہجرہ(اقبال) ایوارڈ دیا گیا۔
1997ء میں ان کی خدمات کے اعتراف میں انہیں صدارتی تمغا برائے حسن کارکردگی عطا کیا گیا۔ طالب علمی کے زمانے میں بھی ان کی صلاحیتوں کا اعتراف کیا جاتا رہا، انہیں 1952 میں گورنمنٹ کالج لاہور کے ’’اکیڈمک رول آف آنر‘‘ سے نوازا گیا۔ وہ 1949،50 کے دوران فلاسوفیکل سوسائٹی کے سیکرٹی بھی رہے۔ انہوں نے شاعری کے علاوہ فلسفہ اور سائنس پر بہت کام کیا اور کتابیں لکھیں، مشہور کتابوں میں
”ادھ کھلا دریچہ“ ”پیشانی میں سورج“ ”جلتی بجھتی آنکھیں“
شامل ہیں۔ انہوں نے متعدد سائنس کی کتب کے ترجمے بھی کئے۔ سائنسی مضامین پر ان کی کتاب 1962ءمیں شائع ہوئی۔ وہ حلقہ ارباب ذوق کے سیکرٹری جنرل بھی رہے۔ گورنمنٹ کالج کے میگزین راوی کے ایڈیٹر بھی رہے۔
. جناب شہزادؔ احمد صاحب سے ہمارے والد گرامی قبلہ سید فخرالدین بلے شاہ صاحب کے گھریلو اور بے تکلفانہ مراسم تھے۔ رات گئے بھی وہ ہمارے ہاں تمام تر تقریبات میں نجی محافل میں شریک رہتے لیکن عارضہ قلب میں مبتلا ہونے کے بعد ان کی طبیعت ٹھکانے نہیں رہتی۔ اکثر تو ان کی حالت اس قدر بگڑ جاتی تھی کہ میں نے ان کو والد گرامی قبلہ سید فخرالدین بلے شاہ سے مخاطب ہوکر یہ فرماتے ہوئے بھی سنا کہ ”بلےصاحب لگتا ہے اب کوچ کا وقت آگیا ہے ایک تو تکلیف کی شدت میں کمی نہیں ہورہی اور دوسرے سانس اکھڑ اکھڑ جارہا ہے۔ آپ میں بہت حوصلہ ہے وی ون ( V.1) سے وی فائف(V.5) تک مکمل طور ڈیمجڈ کا ای سی جی دیکھ کر بھی آپ کا وی سکس (V.6) پر ہی اتنا دارومدار رکھنا کہ سگریٹ نوشی تو کیا برج یا شطرنج کی بازیوں میں بھی کمی نہیں آئی اور آرام کرنے اور ایک دو گھنٹے سے زیادہ سونے کا تو آپ کی زندگی کی لغت میں تصور بھی نہیں ہے۔
——
یہ بھی پڑھیں : شہزاد احمد کا یومِ وفات
——
قوت ارادی( Will Power ) کی ایسی مثال مشکل سے ہی ملے گی، بلے صاحب آپ کو دیکھ کر تو دل کرتا ہے اچھل کر اپنی مصروفیات میں کود پڑوں۔ آپ کو دیکھ کر مجھے بہت حوصلہ ملتا ہے اور میں خود سے مخاطب ہوتا ہوں کہ شہزاد احمد اپنے تمام تر موخر منصوبوں کو پھر سے شروع کردو“
شہزاد احمد شہزاد صاحب اپنی اسی علالت کے دوران معروف ماہرِ امراض قلب ڈاکٹر کمال کے بھی زیرِ علاج رہے اور انہوں نے سید فخرالدین بلے شاہ صاحب کی تقلید میں ادویات اور دیگر ہدایات سے کہیں زیادہ انحصار قوت ارادی پر کرنا شروع کردیا ۔ البتہ سگریٹ نوشی سے توبہ کرلی اور سونے اٹھنے اور آرام کرنے کے اوقات مقرر کرلیے ۔ عارضہ قلب میں مبتلا ہونے سے قبل وہ ٹی ہاؤس یا وزیرآغا ہاؤس ۔ یا والد گرامی کی اقامت گاہ پر رات گئے ادبی نشستوں یا محافل اور تقریبات میں موجود ضرور نظر آتے تھے لیکن بعدازاں انہوں نے رات دس یا زیادہ سے زیادہ ساڑھے دس بجے کی حد مقرر کرلی تھی ۔
مجھےاچھی طرح سے یاد ہے کہ کہ جب والد گرامی قبلہ سید فخرالدین بلے شاہ صاحب اس وقت کے وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو کی خواہش کے احترام میں ڈیپوٹیشن پر اسلام آباد آگئے تھے اور ان کی پوسٹنگ وزارت مزہبی امور میں تھی ۔
بیک وقت تین جرائد . ماہنامہ ہم وطن اسلام آباد . ماہنامہ اوقاف اسلام آباد . ماہنامہ یاران وطن اسلام آباد کے بانی مدیراعلی کی حیثیت سے ان کی مصروفیات حد درجہ بڑھ چکی تھیں ۔ گویا کہ رات دن ایک تھا ۔ہم لوگ اسلام آباد و راولپنڈی سیٹلائٹ ٹاؤن راولپنڈی رہائش پزیر تھے ۔ وہاں بھی جناب شہزاد احمد صاحب کا آنا اور قیام فرمانا اور اس حوالے سے بہت سی یادیں اور باتیں واقعات حافظے میں محفوظ ہیں ۔ متعدد بار تو ان کی آمد احمد ندیم قاسمی صاحب یا ڈاکٹر وزیر آغا صاحب یا پروفیسر ڈاکٹر آغا سہیل صاحب کے ہمراہ ہوا کرتی تھی ۔ غالبا“ اس وقت شہزاد احمد صاحب روٹی کارپوریشن آف پاکستان میں اہم عہدے پر فائز تھے۔
سرگودھا میں قیام کے دوران جب والد گرامی عارضہ قلب کا شکار ہوئے تو جہاں فیض احمد فیض ۔ احمد ندیم قاسمی ۔ جاوید احمد قریشی۔ ڈاکٹر آغا سہیل ۔ عطاالحق قاسمی اور بریگیڈیئر ضمیر جعفری اور صدیق سالک . اشفاق احمد اور بانو قدسیہ آپا۔ محمد طفیل(نقوش والے)۔مختار مسعود علیگ اور برہان فاروقی علیگ پرویز بزمی۔ طفیل ہوشیارپوری ۔ شبنم رومانی ۔ محترمہ ادا جعفری پھپو ۔ محسن بھوپالی۔ یزدانی جالندھری۔ میرزا ادیب۔ آئی۔اے۔ رحمن۔ عباس اطہر ۔حضرت وقار انبالوی اور حضرت علامہ غلام شبیر بخاری جیسی عظیم المرتبت ہستیوں میں جناب شہزاد احمد صاحب بھی شامل ہیں کہ جو محض ہمارے والد گرامی قبلہ سید فخرالدین بلے شاہ صاحب کی عیادت کےلیے دور دراز سے سفر کی صعوبتیں اٹھا کر سرگودھا پہنچے تھے۔
۔1992۔ میں سید فخرالدین بلے صاحب کی قائم کردہ عالمی شہرت کی ادبی تنظیم ”قافلہ“ کے زیر اہتمام جناب شہزاد احمد صاحب کا ساٹھ سالہ جشن ولادت نہایت عالی شان طریقے سے منایاگیا ۔ سید فخرالدین بلے صاحب کی رہائش گاہ پر ہرماہ کو قافلہ کا پڑاؤ ڈالا جاتا تھا ۔اس قافلہ پڑاؤ کی دھوم پوری اردو دنیا میں مچی ہوئی تھی اور یہ لاہور میں ادبی و علمی روایت و رواج اور رحجان کا حصہ تھی۔ احمد ندیم قاسمی ۔ ڈاکٹر وزیر آغا ۔ ڈاکٹر خواجہ محمد ذکریا۔ ڈاکٹر آغا سہیل ۔ الطاف فاطمہ۔ ڈاکٹر خورشید رضوی۔ منور سعید ۔ اشفاق احمد ۔ بانو قدسیہ ۔ جاوید احمد قریشی ۔ مرتضی برلاس ۔ ڈاکٹر اجمل نیازی ۔ڈاکٹر سلیم اختر ۔ ڈاکٹر انور سدید ۔پرتو روہیلہ ۔ عبدالعزیز خالد ۔ صدیقہ بیگم ۔ نورین طلعت عروبہ۔ نسرین قریشی ۔ سیما پیروز ۔ پیروز بخت قاضی ۔ اسرار زیدی ۔ اشفاق نقوی ۔ اصغر ندیم سید ۔ علامہ غلام شبیر بخاری ۔ برہان فاروقی۔ سرفراز سید۔ جاوید طفیل ۔ طفیل ہوشیارپوری ۔ اسلم کولسری۔ منصور آفاق اور شہزاد احمد جیسی نابغہ روزگار شخصیات سینکڑوں کی تعداد میں باقائدگی سے قافلہ پڑاؤ میں شرکت کو ایک اعزاز سمجھتی تھیں۔
——
یہ بھی پڑھیں : ناصر شہزاد کا یوم وفات
——
قافلہ کے ماہانہ پڑاؤ کی گونج اخبار جہاں ۔ اخبار خواتین ۔۔ فیملی ۔ جنگ ۔ نوائے وقت ۔ مشرق۔ امروز۔ پاکستان اور ڈان جیسے قومی جرائد و اخبارات اور ہفت روزہ آواز جرس کے شماروں میں سنائی دیا کرتی تھی۔ اسلم کولسری اکثر اس صوفے پر براجمان ہوتے تھے کہ جو دیوار پر آویزاں آنس معین کے پورٹریٹ کے فریم کے نیچے رکھا ہوتا تھا اور شہزاد احمد اکثر اسلم کولسری کے مد مقابل تشریف فرما ہوتے تھے ایک روز شہزاد احمد نے اسلم کولسری سے پوچھ ہی لیا کہ کیا بات ہے آپ نے تو اپنی نشست بھی مخصوص کر رکھی ہے ۔ ان کی اس بات کے جواب میں اسلم کولسری نے فرمایا کہ آنس معین کے زیر سایہ بیٹھ کر یوں سمجھ لیجے کہ آنس معین کی فکر انگیز شاعری سے فیض پاتا ہوں اور بلے صاحب اور آپ سب کو دیکھنا اور سننا اور زیادہ اچھا لگتا ہے۔ یہ سن کر شہزاد احمد مسکرائے اور کہا کہ میں جس سیٹ پر بیٹھتا ہوں مجھے یہ نشست اس لیے پسند ہے کہ آنس معین کو شریک قافلہ پڑاؤ سمجھتا ہوں اور مجھے لگتا ہے کہ آنس معین بھی داد دینے والوں میں شامل ہے۔ بلکہ کبھی کبھی تو جب آنس معین کی جانب داد طلب نظروں سے دیکھتا ہوں تو یقین کریں کہ آپ سب سے بڑھ کر آنس معین داد دیتے ہیں ۔جبکہ عام طور پر جب آنس معین کی شاعری کے تناظر میں اس پورٹریٹ کو دیکھتا ہوں تو لگتا یہی ہے کہ جیسے آنس معین کہہ رہا ہو کہ
——
حیرت سے جو یوں میری طرف دیکھ رہے ہو
لگتا ہے کبھی تم نے سمندر نہیں دیکھا
( آنس معین )
——
شہزاد احمد ہمارے بابا جانی سید فخرالدین بلے کی قائم کردہ ادبی تنظیم ”قافلہ “ کے حوالے سے فرمایا کرتے تھے کہ میں قافلے کے پڑاؤ کی روایت کو لاہور کی تاریخ ِ ادب کا روشن باب سمجھتا ہوں ،بے شک شہزاد احمد سے ہمارے والد گرامی کا قلبی ۔ ذہنی اور فکری ہم آہنگی کا عجیب بلکہ مثالی تعلق تھا ۔ شہزاد احمد خود کو اعلانیہ طور پر سید فخرالدین بلے کے کام اور کلام کا مداح کہا کرتے تھے اور کہتے تھے کہ سید فخرالدین بلے سے فلسفے، نفسیات، علم الکلام ، تاریخ ، تصوف اور تنقیدی موضوعات پر گفتگو کرکے مزہ آجاتا ہے۔ ان کا اپنا زاویہ ء نگاہ تھا۔ وہ دوسروں کی عینک سے حالات و واقعات کامشاہدہ نہیں کرتے تھے۔ان کی غزلیں اور نظمیں بھی ان کے گہرے مطالعےکی غمازی کرتی نظرآتی ہیں ۔شہزاد احمد سیدفخرالدین بلے کےدنیا سے چلے جانے پر بے حد دکھی دکھائی دئیے اور کہا کہ ان کے ساتھ میرے تعلقات نصف صدی کا قصہ نہیں ،اس سے بھی آگے کی بات ہے۔بلے بھئی بلے۔ان کے گھر سجنے والی شعری اور ادبی محفلیں تاریخ ِ لاہور کا ایک باب ہے ۔افسوس۔اس زمین نے ایک اور آسمان کواپنے اندر اتار لیا ہے ۔ایسی مرنجاں مرنج شخصیات کو مدتوں فراموش نہیں کیا جاسکتا۔”
شہزاد احمد نے جہاں بحثیت شاعر اور محقیق اور تنقید نگار کے حوالے سے اپنی صلاحتوں کو تسلیم کروایا وہیں نفسیات اور فلسفہ کے موضوعات پر انتہائی اہم مضامین سپرد قلم کیے اور متعدد اہم ترین سائنسی موضوعات پر معروف کتب کے تراجم بھی ان کے نام کے ساتھ یادگار ہو چکے ہیں۔ اسلام اور فلسفہ ان کا محبوب موضوع ہے اور اس سلسلے میں ان کی تصانیف اور تراجم پاکستانی ادب کا بیش قیمت سرمایہ ہیں۔ انہیں انجمن ترقی ادب کا بہترین مضمون نویسی کا ایوارڈ 1958ء، نقوش ایورڈ 1989ء اور مسعود کھدر پوش ایوارڈ 1997ء بھی مل چکا ہے۔ ماہنامہ ’’بیاض‘‘ لاہور ان کی گراں قدر خدمات کے اعتراف کے طور پر ان کے نام سے ایک خصوصی شمارہ بھی شائع کر چکا ہے۔
مجلس کے سربراہ کی حیثیت شہزاد احمد کی خدمات کا اعتراف نہ کرنا یقینا“ نا انصافی ہوگی اور انہوں نے جس طرح چیلنج سمجھ کر اس ذمہ داری کو نبھایا . شہزاداحمد کا انتقال 80 برس کی عمر میں یکم ۔اگست 2012 بمطابق 12۔رمضان المبارک 1433ھ بروز بدھ شام چار بجے لاہور میں ہوا۔۔ شہزاد احمد کے سوگواران و پسماندگان میں دو بیٹے اور تین بیٹاں شامل ہیں۔
——
یہ بھی پڑھیں : شہاب دہلوی کا یوم وفات
——
نظم
——
ہم اور ہوا
گھاٹ گھاٹ کا پانی پینا
میری بھی تقدیر رہا ہے
تم نے بھی دُنیا دیکھی ہے
پھر بھی جب ہم ملتے ہیں
بچوں جیسی معصومی سے باتیں کرتے ہیں
تم کہتی ہو
آج سے پہلے تیرے جیسا کوئی نہیں تھا
میں کہتا ہوں
میں نے تجھ کو ہر چہرے میں تلاش کیا ہے
تم کہتی ہو
میرا دل دوشیزہ دھرتی جیسا ہے
میں کہتا ہوں
میں اس دوشیزہ دھرتی کی پہلی بارش ہوں
لیکن ہم پہ ہوا ہنستی ہے
پیار سے آکے لپٹ جاتی ہے
اور کہتی ہے
میں بھی پہلی بار چلی ہوں۔
——
وعدہ کر کے بھی نہیں ساتھ نبھانے والے
کتنے بیدرد ہیں یہ لوگ زمانے والے
اہلِ کوفہ نے بلایا تو چلے آئے ہیں
کیسے سادہ ہیں محمد کے گھرانے والے
رحم کرتے ہیں تو اس کی بھی نہیں حد کوئی
کسی سفاک کو خاطر میں نہ لانے والے
فیصلہ آپ کریں، آپ کو کرنا کیا ہے؟
آپ پر چھوڑتے ہیں شمع بجھانے والے
ظلم کے تیروں سے چھلنی ہیں حسین ابنِ علی
غلبۂ کفر سے دنیا کو بچانے والے
ظلم کرنے پہ تلی بیٹھی ہے دنیا ساری
اور ہم لوگ فقط سوگ منانے والے
عرصۂ دہر میں باقی نہیں رہتا کچھ بھی
خاک ہو جاتے ہیں خیموں کو جلانے والے
کس کو معلوم کہ دن بھر کے تھکے ہارے ہوئے
شام کو اپنے لہو میں ہیں نہانے والے
کیا بتائیں تجھے کیا چیز ہے یہ تشنہ لبی
خشک ہو جاتے ہیں دریا نظر آنے والے
جو بچاتے نہیں کل کے لیے اک دانہ بھی
وہی درویش ہیں عقبیٰ کے خزانے والے
درِ مولا پہ پڑے ہیں تو بڑے ہیں شہزاد
یہ پرندے نہیں اڑ کر کہیں جانے والے
——
رخصت ہوا تو آنکھ ملا کر نہیں گیا
وہ کیوں گیا ہے یہ بھی بتا کر نہیں گیا
وہ یوں گیا کہ باد صبا یاد آ گئی
احساس تک بھی ہم کو دلا کر نہیں گیا
یوں لگ رہا ہے جیسے ابھی لوٹ آئے گا
جاتے ہوئے چراغ بجھا کر نہیں گیا
بس اک لکیر کھینچ گیا درمیان میں
دیوار راستے میں بنا کر نہیں گیا
شاید وہ مل ہی جائے مگر جستجو ہے شرط
وہ اپنے نقش پا تو مٹا کر نہیں گیا
گھر میں ہے آج تک وہی خوشبو بسی ہوئی
لگتا ہے یوں کہ جیسے وہ آ کر نہیں گیا
تب تک تو پھول جیسی ہی تازہ تھی اس کی یاد
جب تک وہ پتیوں کو جدا کر نہیں گیا
رہنے دیا نہ اس نے کسی کام کا مجھے
اور خاک میں بھی مجھ کو ملا کر نہیں گیا
ویسی ہی بے طلب ہے ابھی میری زندگی
وہ خار و خس میں آگ لگا کر نہیں گیا
شہزاد__ یہ گلہ ہی رہا اس کی ذات سے
جاتے ہوئے وہ کوئی گلہ کر نہیں گیا
——
اپنی تصویر کو آنکھوں سے لگاتا کیا ہے
اِک نظر میری طرف بھی ترا جاتا کیا ہے
میری رسوائی میں وہ بھی ہیں برابر کے شریک
میرے قصے مرے یاروں کو سُناتا کیا ہے
پاس رہ کر بھی نہ پہچان سکا تو مُجھ کو
دور سے دیکھ کے اب ہاتھ ہلاتا کیا ہے
ذہن کے پردوں پہ منزل کے ہیولے نہ بنا
غور سے دیکھتا جا راہ میں آتا کیا ہے
زخمِ دل جُرم نہیں توڑ بھی دے مہرِ سکوت
جو تُجھے جانتے ہیں اُن سے چُھپاتا کیا ہے
سفرِ شوق میں کیوں کانپتے ہیں پاؤں ترے
آنکھ رکھتا ہے تو پھر آنکھ چُراتا کیا ہے
عمر بھر اپنے گریباں سے اُلجھنے والے
تُو مُجھے میرے ہی سائے سے ڈراتا کیا ہے
چاندنی دیکھ کے چہرے کو چھپانے والے
دُھوپ میں بیٹھ کے اب بال سُکھاتا کیا ہے
مر گئے پیاس کے مارے تو اُٹھا ابرِ کرم
بُجھ گئی بزم تو اب شمع جلاتا کیا ہے
میں ترا کُچھ بھی نہیں ہوں مگر اِتنا تو بتا
دیکھ کر مُجھ کو ترے ذہن میں آتا کیا ہے
تیرا احساس ذرا سا تری ہستی پایاب
تُو سمندر کی طرح شور مچاتا کیا ہے
تُجھ میں کس بَل ہے تو دُنیا کو بہا کر لے جا
چائے کی پیالی میں طوفان اُٹھاتا کیا ہے
تیری آواز کا جادو نہ چلے گا اُن پر
جاگنے والوں کو شہزادؔ جگاتا کیا ہے
——
گِلے ہزار سہی، حد سے ہم بڑھیں گے نہیں
ہے کوئی بات مگر آپ سے کہیں گے نہیں
ہم اِس لڑائی کو شرطِ ادب سمجھتے ہیں
وہ سامنے بھی اگر آ گیا، مِلیں گے نہیں
جو بات دِل میں ہے، خود اپنے کان میں کہہ لے
یہ گفتگو در و دیوار تو سُنیں گے نہیں
جہاں میں کوئی بھی شے بے سَبب نہیں ہوتی
سَبب کوئی بھی ہو، اِنکار ہم سُنیں گے نہیں
عجب نہیں کہ ، اِسی بات پر لڑائی ہو
معاہدہ یہ ہُوا ہے، کہ اب لڑیں گے نہیں
کِسی بھی خوف سے کیوں چھوڑدیں تِری قُربت
کہیں بھی جائیں، اِس الزام سے بچیں گے نہیں
جو ہم نے دیکھا ہے لفظوں میں کیسے آئے گا
جو نقش دِل میں ہیں، وہ ریت پر بنیں گے نہیں
ہوا کے ساتھ لپکتی ہے تِیرگی شہزاد
چراغ ہوں بھی تو اِس رات میں جلیں گے نہیں
——
تصویر کے خطوط نگاہوں سے ہٹ گئے
میں جن کو چومتا تھا وہ کاغذ تو پھٹ گئے
انسان اپنی شکل کو پہچانتا نہیں
آ آ کے آئینوں سے پرندے چمٹ گئے
بنتی رہی وہ ایک سویٹر کو مدتوں
چپ چاپ اس کے کتنے شب و روز کٹ گئے
کس شوق سے وہ دیکھ رہے تھے ہجوم کو
جب میں نظر پڑا تو دریچے سے ہٹ گئے
آخر کسی کشش نے انھیں کھینچ ہی لیا
دروازے تک نہ آئے تھے آکر پلٹ گئے
پت جھڑ میں اک کلی بھی میسر نہ آسکی
پس سگرٹوں کی راکھ سے گلدان اَٹ گئے
بدلا ہوا دکھائی دیا آسماں کا رنگ
ذرے زمیں سے، شاخ سے پتے لپٹ گئے
اتنا بھی وقت کب تھا کہ پتوار تھام لیں
ایسی چلی ہوا کہ سفینے اُلٹ گئے
پابندیاں تو صرف لگی تھیں زبان پر
محسوس یہ ہوا کہ مرے ہاتھ کٹ گئے
کچھ سرد تھی ہوا بھی نظر کے دیار کی
کچھ ہم بھی اپنے خول کے اندر سمٹ گئے
ہر سُو دکھائی دیتے ہیں نیزہ بدست لوگ
اے کاخِ ظلم تیرے طرف دار گھٹ گئے
شہزاد پھر سے رخت سفر باندھ لیجیے
رستے بھی سوکھ جائیں گے، بادل تو چھٹ گئے
——
یہ سوچ کر کہ تیری جبیں پر نہ بل پڑے
بس دور ہی سے دیکھ لیا اور چل پڑے
دل میں پھر اِک کسک سی اٹھی مدتوں کے بعد
اِک عمر سے رکے ہوئے آنسو نکل پڑے
سینے میں بے قرار ہیں مردہ محبتیں
ممکن ہے یہ چراغ کبھی خود ہی جل پڑے
اے دل تجھے بدلتی ہوئی رُت سے کیا ملا
پودوں میں پھول اور درختوں میں پھل پڑے
اب کس کے انتظار میں جاگیں تمام شب
وہ ساتھ ہو تو نیند میں کیسے خلل پڑے
شہزاد دل کو ضبط کا یارا نہیں رہا
نکلا جو ماہتاب سمندر اچھل پڑے
——
کبھی ان سے کبھی خود سے بھی غافل ہو گیا ہوں میں
دیارِ بیخودی میں اب تیرے قابل ہو گیا ہوں میں
سرِ محفل بہ اندازِ تغافل دیکھنے والے
تیری بے اعتنائی کا بھی قائل ہو گیا ہوں میں
بگولوں کی طرح اڑتا پھرا ہوں شوقِ منزل میں
مگر منزل پہ آ کے خاکِ منزل ہو گیا ہوں میں
میری ساحل نشینی انتظارِ سیلِ بے پایاں
انہیں ڈر ہے کہ اب پابندِ ساحل ہو گیا ہوں میں
تمہاری آرزو میں میں نے اپنی آرزو کی تھی
خود اپنی جستجو کا آپ قائل ہو گیا ہوں میں
میری سب زندگی شہزاد اسی عالم میں گزری ہے
کبھی ان سے کبھی غم سے مقابل ہو گیا ہوں میں
——
چپ کے عالم میں وہ تصویر سی صورت اس کی
بولتی ہے تو بدل جاتی ہے رنگت اس کی
آنکھ رکھتے ہو تو اس آنکھ کی تحریر پڑھو
منہ سے اقرار نہ کرنا تو ہے عادت اس کی
ہے ابھی لمس کا احساس مرے ہونٹوں پر
ثبت پھیلی ہوئی بانہوں پہ حرارت اس کی
وہ اگر جا بھی چکی ہے تو نہ آنکھیں کھولو
ابھی محسوس کئے جاؤ رفاقت اس کی
وہ کبھی آنکھ بھی جھپکے تو لرز جاتا ہوں
مجھ کو اس سے بھی زیادہ ہے ضرورت اس کی
وہ کہیں جان نہ لے ریت کا ٹیلہ ہوں میں
میرے کاندھوں پہ ہے تعمیر عمارت اس کی
بے طلب جینا بھی شہزاد طلب ہے اس کی
زندہ رہنے کی تمنا بھی شرارت اس کی
——
حال اس کا تیرے چہرے پہ لکھا لگتا ہے
وہ جو چپ چاپ کھڑا ہے تیرا کیا لگتا ہے
یوں تو ہر چیز سلامت ہے میری دنیا میں
ایک تعلق ہے جو ٹوٹا ہوا لگتا ہے
میں نے سوچا تھا کہ آباد ہوں اک شہر میں میں
یہاں تو ہر شخص کا انداز جدا لگتا ہے
مدتیں بیت گئیں طے نہ ہوئی منزلِ شوق
ایک عالم میرے رستے میں پڑا لگتا ہے
اے میرے جذبۂ دوراں مجھ میں کشش ہے اتنی
جو خطا ہوتا ہے وہ تیر بھی آ لگتا ہے
جانے کون سی پستی میں گِرا ہوں شہزاد
سورج بھی اس قدر دور ہے کہ دِیا لگتا ہے
یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ