اردوئے معلیٰ

Search

شہِ کونین کے عاشق حضوری میں رہے اکثر

نگاہِ یار کے طالب تجلی میں رہے اکثر

 

تصور محفلِِ نوری اڑا کے لے گئے ذاکر

پرندے بھی قفس سے ایسی دوری میں رہے اکثر

 

حریمِِ ناز کے جوشہر منڈلاتے ہیں متوالے

وہ شیدا قبل اس سے خوابِ نوری میں رہے اکثر

 

مسافر گرمیِ خورشید کی شدت سے گھبرائے

مصائب میں انہی کے دل صُبوری میں رہے اکثر​

 

طلب سے ماوراء ہوتے ہیں طوفِ شمع کے جو گرد

وہ پروانے سدا نوری جلالی میں رہے اکثر

 

یہ اُنظر نا کے طالب اب کھڑے کب سے مؤدب ہیں

نفوسی ایسے کب سے ناصبوری میں رہے اکثر

 

​سیہ بدلی میں معجز نور پوشیدہ تھا، طہٰ تو

خشیت مارے گھبرا کر تھے کملی میں رہے اکثر

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ