صدائیں آ رہی ہیں کچھ گُلوئے نیم بسمل سے

صدائیں آ رہی ہیں کچھ گُلوئے نیم بسمل سے

کوئی سُن کر یہ افسانہ کہیں کہہ دے نہ قاتل سے

 

کبھی اک اشکِ خوں گشتہ ، کبھی اک آہِ افسردہ

نکل آئے ہیں دل کے راز کس کس رنگ میں دل سے

 

نظامِ عالمِ الفت کہیں برہم نہ ہو جائے

ذرا کچھ سوچ کر ہم کو اٹھانا اپنی محفل سے

 

مآلِ لذتِ آزار ہیں بربادیاں میری

نہ کچھ تقدیر سے شکوہ ، شکایت ہے نہ قاتل سے

 

سفر میں دوستو یادِ روش بھی اک قیامت ہے

کہ اکثر گھر پلٹ آتا ہوں میں جا جا کے منزل سے

 

کوئی ناکامِ حسرت ڈوبتا ہے وائے ناکامی

لپٹ کر رو رہی ہے بے کسی آغوشِ ساحل سے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ