اردوئے معلیٰ

Search

صدقے میں سادگی پہ تری خوش گمانِ دل

دل سے لگا لیے ہیں سبھی قاتلانِ دل

 

جلوہ فروزِ مسندِ دل ہے وہ آج بھی

ویران کرگیا جو کبھی کا جہانِ دل

 

کل تک سکندری تھی فقیری ہے آج کل

راضٰ ہر ایک حال میں ہیں بندگانِ دل

 

دے درد بھی تو وہ کہ جسے لادوا کہیں

یعنی کہ کر سلوک بھی شایانِ شانِ دل

 

ہے دردناک بھی تو یہ منظر کمال بھی

اپنے مکیں کو ڈھونڈ رہا ہے مکانِ دل

 

پردے سماعتوں کے نہ پھٹ جائیں دیکھنا

اشعار بولنے پہ جو آئیں زبانِ دل

 

وہ کام دل کے وہم و گماں میں بھی نہ تھا کبھی

تو نے کر دیا ہے مرے بد گمانِ دل

 

اپنی شکست ساتھ لیے جا رہا ہوں میں

میں سخت شرمسار ہوں شیشہ گرانِ دل

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ