اردوئے معلیٰ

Search

صد شُکر ملی مجھ کو گدائی ترے در کی

حصے میں غلامی مرے آئی ترے در کی

 

محسوس ہُوا یُوں مجھے حاضر ہوں وہاں میں

جب بات کسی نے ہے سُنائی ترے در کی

 

نقشہ نہ مرے دل سے نکل پائے گا ہر گِز

تصویر ہے وہ اس میں بسائی ترے در کی

 

کیا اُس کو غرض دیکھے وہ آرائشِ جنت

نظروں میں چمک جس کی سمائی ترے در کی

 

قرآن میں جآوُکَ ہے فرمان خدا کا

خالق نے ہے خود راہ دکھائی ترے در کی

 

وہ صحنِ حرم مسجد و محراب وہ گنبد

دلکش ہے بہت جلوہ نُمائی ترے در کی

 

جتنے بھی کہ ذی شان ہیں اور جتنے بڑے ہیں

کرتے ہیں بیاں سارے بڑائی ترے در کی

 

محتاج و گدا یا کہ ہوں سلطانِ زمانہ

ہر ایک نے خیرات ہے پائی ترے در کی

 

سو بار زیارت ہو تو پھر تِشنہ لبی ہے

رہ رہ کے ہے پھر آس لگائی ترے در کی

 

جِتنا بھی کروں شُکر ادا اِس پہ وہ کم ہے

مولیٰ نے ہے تنویر دِکھائی ترے در کی

 

مرزا کے لئے کاش کہ بخشش کی سند ہو

کرتا ہے جو یہ مدح سرائی ترے در کی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ