اردوئے معلیٰ

Search

صد شکر کہ سرکار کا میں مدح سرا ہوں

ہے اُن کا کرم مجھ پہ کہ میں وقفِ ثنا ہوں

 

کیوں کھاؤں بھلا ٹھوکریں در در کی جہاں میں

جب قاسمِ نعمت کا ازل سے میں گدا ہوں

 

بخشی ہے مجھے مدح سرائی کی سعادت

آقا! میں دل و جان سے ممنونِ عطا ہوں

 

عشق ان کا ہو ہر سینۂ بے نور میں روشن

لے کر میں ضیا ان کی محبت کی چلا ہوں

 

کیوں سطوتِ شاہاں کے قصائد کروں مرقوم

خوش بخت ہوں سرکار کا میں نغمہ سرا ہوں

 

کیا خاک گرائیں گے مجھے اہلِ زمانہ

تھامے ہوئے جب آپ کے دامن کو کھڑا ہوں

 

سرکار سے نسبت پہ مجھے ناز ہے آصف

رکھیں گے وہی لاج بھلا ہوں کہ برا ہوں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ