اردوئے معلیٰ

طلوعِ شمس بھی واری جمالِ ماہ بھی نازاں

جہانِ رنگ و بو کی رونقیں ساری ترے قرباں

 

سسکتی زندگی آنے سے تیرے مُسکرا اُٹھی

جہاں ظلمت کدہ تھا تجھ سے پہلے محسنِ انساں

 

تمہی ہو شاہکارِ لم یزل مقصودِ ہر عالم

حبیبِ رب تری چاہت خدا کے عدل کی میزاں

 

جہاں کی رہبری کا تاج بس تیرے ہی شایاں ہے

تمہی ہو مقصدِ قرآں تمہی ہو حاصلِ ایماں

 

عطا ہو ہم کو بھی اِک بوند بحرِ عشقِ جامیؒ سے

کوئی آنسو کوئی رقّت کوئی کیفِ شبِ ہجراں

 

ترا دربار وہ ہر پل بٹے خیرات عالم میں

تمہاری ذات وہ جس کو کہیں ہر دور کا سلطاں

 

نہ گھبرانا مصائب میں وظیفہ ہے غلاموں کا

سجا محفل درودوں کی پکار اُن کو دلِ ناداں

 

شکیلِؔ بے سروساماں ترے ہی آسرے پر ہے

تمہی ہو چارہ گر اس کے تمہی ہر درد کے درماں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔