اردوئے معلیٰ

Search
سرکار کے دو مبارک اسماء "امین ” اور "مامون” ایک ساتھ بطور ردیف نظم

 

عالِم ظاہر و مَبطون ! اے امین و مامون !

ساری عقلیں تِری مَمنون اے امین و مامون !

 

جیسے قرآن ہے ، یونہی کتب سابقہ بھی

تھیں تِرے ذکر سے مَشحون اے امین و مامون !

 

بادشہ تیرے گدا ،فلسفی سودائی ہیں

حُسنِ عالَم تِرا مَجنون اے امین و مامون !

 

مدح خُو ہے تِرا ہر دم تہِ ظِلِّ رحمت

نقص جُو ہے تِرا مَلعون اے امین و مامون !

 

قبلِ تکمیل ہی مَعروض ہو مقبول ، اگر

ہو تِرے نام سے مَقرون اے امین و مامون !

 

ناسخِ جملہ شرائع ! تو رسولِ خاتَم

تا ابد ہے تِرا قانون اے امین و مامون !

 

صاحبِ کنزِ ثنائے کَفِ پا کیونکر ہو

طالبِ دولتِ قارون اے امین و مامون !

 

پہلے بھی نور چمکتا رہا تیرا ، بن کر

کبھی یوسف ، کبھی ذُوالنّون اے امین و مامون !

 

جانِ عیسٰی ! ہے تِرے دَم سے بَہ نَصِّ قطعی

دور تعذیب کا طاعون اے امین و مامون !

 

تیری تالیفِ یَتَامٰی کے مخالف کےلئے

درس ہے سورۂِ مَاعُون اے امین و مامون !

 

مُنجیِٔ نوح ! تِرے اسمِ مسرّت کے طفیل

غم سے ناجی ہوا ذُوالنّون اے امین و مامون !

 

عظمتیں پائے معظمؔ سے لپٹ جائیں ، جو یہ

تیرے قدموں میں ہو مَدفون اے امین و مامون !

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ