اردوئے معلیٰ

عدم سے لائی ہے ہستی میں آرزوئے رسول

عدم سے لائی ہے ہستی میں آرزوئے رسول

کہاں کہاں لیے پھرتی ہے جستجوئے رسول

 

خوشا وہ دل کہ ہو جس دل میں آرزوئے رسول

خوشا وہ آنکھ جو ہو محوِ حُسن روئے رسول

 

بلائیں لوں تری اے جذبِ شوق صَلِّ علیٰ

کہ آج دامنِ دل کھنچ رہا ہے سوئے رسول

 

تلاش نقش کف پائے مصطفی کی قسم

چُنے ہیں آنکھوں سے ذرّات خاک کوئے رسول

 

شگفتہ گلشنِ زہرا کا ہر گل تر ہے

کسی میں رنگِ علی اور کسی میں بوُئے رسول

 

پھر ان کے نشہ عرفاں کا پوچھنا کیا ہے

جو پی چکے ہیں ازل میں مئے سبوئے رسول

 

عجب تماشا ہو میدانِ حشر میں بیدمؔ

کہ سب ہوں پیشِ خدا اور میں روبروئے رسول

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ