اردوئے معلیٰ

Search

عذابِ ہجرتِ پیہم سنبھلنے دے

حصارِ بے مکانی سے نکلنے دے

 

غبار بے سر و سامانی پردہ رکھ

قبائے بے لباسی تو بدلنے دے

 

ہوائے شہر غربت اک ذرا دھیرے

چراغ شام تنہائی کو جلنے دے

 

دیار اجنبی کے منجمد لہجے

سکوتِ گوشۂ جاں میں پگھلنے دے

 

فشارِ احتیاج زندگی مجھ کو

کبھی تو کنجِ غفلت میں بہلنے دے

 

جنونِ رخصتِ تازہ مجھے اس بار

جہاں کچھ بھی نہیں اُس سمت چلنے دے

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ