اردوئے معلیٰ

عرب دیکھتے ہیں عجم دیکھتے ہیں

تیری سمت شاہِ امم دیکھتے ہیں

 

دلوں میں دھڑکتی ان کی محبت

جبینوں پہ سجدے رقم دیکھتے ہیں

 

خدا نے انہیں رحمتِ کل بنایا

عدا پر بھی ان کا کرم دیکھتے ہیں

 

جب آتا ہے نامِ محمد لبوں پر

پرے بھاگتے درد و غم دیکھتے ہیں

 

خدا کی رضا کے لیے سب سے آگے

نبی کے گھرانے کو ہم دیکھتے ہیں

 

جو لپٹی ہوئی ہیں تیری جالیوں سے

وہ آنکھیں بڑی محترم دیکھتے ہیں

 

مواجہ پہ آتے ہیں جتنے بھی زائر

انہیں خود شفیعِ امم دیکھتے ہیں

 

مدینے کی مٹی پہ نیند آ رہی ہے

بلندی پہ جاہ و حشم دیکھتے ہیں

 

حروفِ ثنا پر ہے اک عجز طاری

جبینِ سخن اپنی خم دیکھتے ہیں

 

مدینے سے آتے ہوئے زائروں کی

نگاہوں میں فرقت کا نم دیکھتے ہیں

 

ادھر زندگی رقص کرتی ہے مظہرؔ

جدھر وہ خدا کی قسم دیکھتے ہیں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات