’’عرش پہ تازہ چھیڑ چھاڑ فرش پہ طُرفہ دھوم دھام‘‘

 

’’عرش پہ تازہ چھیڑ چھاڑ فرش پہ طُرفہ دھوم دھام‘‘

کونین میں ہے چار سوٗ تیرا ہی ذکر صبح و شام

واصف ترا مرے نبی، خلّاقِ دو جہان ہے

’’کان جدھر لگائیے تیری ہی داستان ہے‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

شعور ِ ہست میں ڈھل کر ، شعار ِ آگہی بن کر
سوالی
شاہِ بطحا سے پیار مانگے ہے
رنگ تقدیر کے بدلتے ہیں
میں آپؐ کے در کا ہوں گداگر شہِ والا
میں اِک مسکیں گداگر اُنؐ کے در کا
محبت آپؐ کی ہے قلب و جاں میں
جلالِ کبریا ہر سُو عیاں ہے
’’اے رضاؔ طوفانِ محشر کے تلاطم سے نہ ڈر‘‘
’’گرفتارِ بلا حاضر ہوئے ہیں ٹوٹے دل لے کر‘‘

اشتہارات