اردوئے معلیٰ

Search

عشقِ نبی میں یہ جو ” تڑپ ” ہے مکینِِ شوق

گویا ، متاعِ ارض و سما ہے رہینِِ شوق

 

مائل بہ التفات ہوں آقائے خوش خرام

لگتی ہے مثلِ عرشِ عُلیٰ سر زمینِ شوق

 

سنگِ درِ حضور پہ ہے سجدہ ریز ، سر

ناز آفریں ہے اَوجِ فلک کو جبینِِ شوق

 

زیب۔ِ ریاضِ قلب ہے مدحت کی چاندنی

کیوں فیضیابِ نور نہ ہو یاسمینِِ شوق

 

لازم تھا عشق وحسن کا آپس میں ارتباط

اک عمر سے تھی رمزِ جدائی رہینِِ شوق

 

گویا ، نہیں ہے عقل کو بے رہ روی کا خوف

ہے اِتّباعِ قولِ نبی نکتہ بینِِ شوق

 

ہونٹوں پہ اسمِ والیِ کوثر سجا ہے پھر

گُھلنے لگا ہے روح میں پھر انگبین شوق

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ