اردوئے معلیٰ

Search

عشقِ نبی جو دل میں بسایا نہ جائے گا

سر سے نحوستوں کا یہ سایہ نہ جائے گا

 

اصغرؓ کے خُوں سے اِس کو جلایا حُسینؓ نے

’’ پُھونکوں سے یہ چراغ بجھایا نہ جائے گا ‘‘

 

سہتے رہے اذیتیں ، کہتے رہے بلالؓ

عشقِ رسول دل سے نکالا نہ جائے گا

 

ہم بے کسوں کی لاج بھی رکھنا مرے کریم !

تیرا کہا تو حشر میں ٹالا نہ جائے گا

 

وابستہ ہے جو آپ کے دامن سے یا نبی

محشر میں وہ غُلام رُلایا نہ جائے گا

 

جن کو مرے کریم نے بخشی ہے روشنی

ہوں ظُلمتیں ہزار ، اُجالا نہ جائے گا

 

ہر گز لحد میں فیصلہ ہوگا ، نہ جب تلک

جلوہ رُخِ نبی کا دکھایا نہ جائے گا

 

رخصت ہوا جلیل مدینے سے جس گھڑی

لمحہ وہ دل خراش بُھلایا نہ جائے گا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ