اردوئے معلیٰ

Search

عشق کا ہے یہ ہنر ، میں ہوں یہاں نعت خواں

ورنہ کہاں تیرا ذکر اور کہاں نعت خواں

 

گونجتی ہے شش جہات ، میں ترے ہی رخ کی بات

ہم ہی نہیں، ہیں ترے ، کون ومکاں ، نعت خواں

 

وصف ہے بس ذات میں بات ہے وہ نعت میں

جب بھی پڑھے باندھ کر رکھ دے سماں نعت خواں

 

فرق کے سب بت گرا! رنجشِ دل ختم کر

تو بھی میاں نعت خواں ، میں بھی میاں نعت خواں

 

کیوں نہ ہو خوں میں مرے ، ایک مہک کا سرور

بحر میں ہے سانس کے آبِ رواں ، نعت خواں

 

اس کا گلو شاخِ گل ، تتلی سا ہے میرا شوق

میں بھی وہیں بیٹھوں گا ، بیٹھا جہاں ، نعت خواں

 

ہوش رہے روبرو ،اذنِ نبیِ چاہے گا

پہلی صفوں میں اگر بیٹھا وہاں نعت خواں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ