اردوئے معلیٰ

عشق کچھ ایسی گدائی ھے کہ سبحان اللہ

عشق کچھ ایسی گدائی ھے کہ سبحان اللہ

ھم نے خیرات وہ پائی ھے کہ سبحان اللہ

 

پاوؑں پڑتا ھوں تو وہ ھنس کے لگاتا ھے گلے

بندگی میں وہ خدائی ھے کہ سبحان اللہ

 

شام ھوتے ھی کسی بھُولے ھوئے غم کی مہک

صحن میں یُوں اُتر آئی ھے کہ سبحان اللہ

 

آنکھ اُٹھا کر مَیں ترے عارض و لب کیا دیکھوں

پاوؑں ھی ایسا حنائی ھے کہ سبحان اللہ

 

چہرے پڑھتا ھوں ، کتابیں نہیں پڑھتا اب مَیں

یہ پڑھائی وہ پڑھائی ھے کہ سبحان اللہ

 

پا بہ گِل ھوں مگر اُڑتا ھوں مَیں خوشبو بن کر

قید میں ایسی رھائی ھے کہ سبحان اللہ

 

اک گلِ تر سے ٹپکتی ھوئی شبنم نے مُجھے

آنکھ وہ یاد دلائی ھے کہ سبحان اللہ

 

چھونے والا بھی مہکتا ھی چلا جاتا ھے

ایسی کلیوں سی کلائی ھے کہ سبحان اللہ

 

سب کی آنکھوں سے بچا کر کسی شرمیلے نے

ھم سے یوں آنکھ ملائی ھے کہ سبحان اللہ

 

دِل چُراتا ھے وہ کم بخت بِنا آھٹ کے

ھاتھ میں ایسی صفائی ھے کہ سبحان اللہ

 

آج اِک شوخ نے صاحب ! مجھے میری ھی غزل

ایسے شرما کے سُنائی ھے کہ سبحان اللہ

 

ھنستے گاتے ھوئے فارس کی اُداس آنکھوں میں

ایسی خاموش دُھائی ھے کہ سُبحان اللہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ