اردوئے معلیٰ

Search

عطا ہوتے ہیں بحر و بر گدا دل سے اگر مانگے

اسے حاجت ہی کیا ہو جو عنایت کی نظر مانگے

 

درِ احمد پہ جب ادنیٰ و اعلیٰ سب مساوی ہیں

تہی دامن رہے کیوں با ہنر یا بے ہنر مانگے

 

نمازیں یوں تو مسجد میں بھی کرتا ہوں ادا لیکن

جبیں ناز آفریں ہونے کو بس تیرا ہی در مانگے

 

فضائے ناز میں پرواز کروائیں جو وہ نظریں

تو اُڑنے کے لئے طائر بھلا کیوں بال و پر مانگے

 

تڑپ نے ہی بنا رکھا ہے جب اک گلستاں اس کو

ہوائیں کیوں بھڑکنے کو محبت کا شرر مانگے

 

جو یادِ مصطفےٰ سے دل کو اک لذّت میسر ہے

اسی سے اِک تلاطم آنسوؤں کا ، چشمِ تر مانگے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ