اردوئے معلیٰ

Search

عقیدتوں کا ہماری محور حضور کا نقشِ پا ہوا ہے

تبھی تو عکسِ حسین اس کا ہمارے سر پر سجا ہوا ہے

 

ہر اک نظر کو لبھا رہا ہے سبھی زمانے فدا ہیں اُس پر

کچھ ایسی جدت سے اور ندرت سے سبز گنبد بنا ہوا ہے

 

درود پڑھتا ہوں روز و شب میں سخن کو اِس سے رسد ہے جاری

بس اِس وظیفے کی برکتوں سے ہی اذنِ مدحت عطا ہوا ہے

 

تمھارے منگتے تمھاری جانب تمھی سے لینے چلے ہمیشہ

کہ بابِ رحمت ہر اک گدا کے لیے ہمیشہ کُھلا ہوا ہے

 

نظر یہ آتا ہے دیکھنے میں کہ ہاتھ دونوں ہیں اُن کے خالی

مگر یہ پوچھیں ابو ہریرہ سے اُن کا دامن بھرا ہوا ہے

 

جو چار سو لہلہا رہا ہے مرے وطن کا یہ سبز پرچم

مجھے یقیں ہے یہ سبز گنبد کی اقتدا میں ہرا ہوا ہے

 

دگر نظارے کی سمت بھٹکی ،نہ وقتِ دیدارِ حق سے بہکی

وہ چشمِ مازاغ ہے خدا کی سند سے سُرمہ لگا ہوا ہے

 

کریم ایسے ہیں پھیرتے ہیں وہ جان ہو یا نماز کوئی

درِ رسالت پہ فرض کوئی کبھی کسی کا قضا ہوا ہے؟

 

بس اک کماں کا یا اس سے بھی کم کا فاصلہ تھا حبیب و رب میں

تبھی تو رشکِ نگاہِ عالم وہ جاے قصرِ دنٰی ہوا ہے

 

سجی ہے دستارِ مدحِ آقا ہمارے سر ہم دمک رہے ہیں

فقط یہ نعتِ نبی کا ہے نور جس سے منظر سجا ہوا ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ