اردوئے معلیٰ

Search

غمِ زمانہ جو دل سے بنا کے بیٹھ گیا

میں دل اٹھائے مدینے میں جا کے بیٹھ گیا

 

نظر اٹھی جو مدینے کے تاجِ خضرٰی پر

تو حرف حرف دعا کا دبا کے بیٹھ گیا

 

کہا گیا مجھے اپنی کتاب پڑھنے کو

اُٹھا میں حشر میں، نعتیں سنا کے بیٹھ گیا

 

سلام اُس کے مقدر کو عرش والوں کا

جو آستاں سے ترے لو لگا کے بیٹھ گیا

 

اُٹھائے اُٹھ نہ سکا جالیوں کے آگے سے

نہ جانے دل کو وہاں کیا ہوا کہ بیٹھ گیا

 

اُسے تو خود مرے آقا نے دی دعائے نجات

جو اہلِ بیت کی کشتی میں آ کے بیٹھ گیا

 

مریضِ ہجرِ مدینہ کے پاس آیا طبیب

نگاہیں دیکھیں تو گردن جھکا کے بیٹھ گیا

 

خیالِ یار جمایا تو اس کے بعد کرم

مرے نصیب میں ڈیرہ جما کے بیٹھ گیا

 

تبسمِ شہِ محشر کی آرزو لے کر

قریب ہو کے درِ مصطفٰی کے بیٹھ گیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ