اردوئے معلیٰ

Search

غم گیا لذتِ حیات گئی

ہائے جینے میں تھی جو بات گئی

 

جاں گئی حسن کی زکات گئی

کون سی کوئی کائنات گئی

 

حالتِ غم بدل سکی نہ مری

آبروئے تغیرات گئی

 

کہہ تو دوں عرضِ مدعا لیکن

کیا کروں گا مری جو بات گئی

 

اے غمِ عشق تیری عمر دراز

فکرِ آلام و حادثات گئی

 

موجِ یادِ حبیب جب آئی

لے کے دل سے تکدرات گئی

 

ان کے جاتے ہی یہ ہوا جیسے

رونقِ بزمِ کائنات گئی

 

ظلمتیں ہیں محیطِ دل اب تک

کیسے کہہ دوں نظرؔ میں رات گئی

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ