اردوئے معلیٰ

Search

غِنا وہ آپ سے پائی ہے یا رسول اللہ

کہ تخت ہم کو چٹائی ہے یا رسول اللہ

 

یہ بات نَص میں خود آئی ہے یا رسول اللہ

تمہاری ساری خدائی ہے یا رسول اللہ

 

تمہاری زلف جو چھائی ہے یا رسول اللہ

نثار ہونے شب آئی ہے یا رسول اللہ

 

اُدَھر وہ تیغ کی مانند پل صراط ہے تیز

اِدھر یہ آبلہ پائی ہے یا رسول اللہ

 

تو سامنے ہے ، نہیں بھی ، تِری ثَنَا مجھ کو

اِک ایسے موڑ پہ لائی ہے یا رسول اللہ

 

مکینِ دل تو ہے تُو ہی ، دِکھے بھی تو ہی فقط

یہی نظر کی دہائی ہے یا رسول اللہ

 

میں چاہتا ہوں کہ جلوہ سمو لوں دل میں تِرا

پر آنکھ بیچ در آئی ہے یا رسول اللہ

 

اے اوس و خزرجِ طیبہ مِلانے والے ، پِھر

خلاف بھائی کے بھائی ہے یا رسول اللہ

 

ہیں تیرے سامنے ہژدہ ہزار عالَم یوں

کہ جوں ، ہتھیلی پہ رائی ہے یا رسول اللہ

 

بَنورِ نکتۂِ ” لولاک ” جگ پہ روشن ہے

تو سب کی عِلّتِ غائی ہے یا رسول اللہ

 

ہے چاہِ یوسفی پر خِضْر ، یعنی تا بہ ذَقَن

تمہارے خَط کی رسائی ہے یا رسول اللہ

 

تمہاری نعت سدا بر لبِ معظمؔ ہو

یہی تو اس کی کمائی ہے یا رسول اللہ

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ