اردوئے معلیٰ

Search

فرازِ فکر نہ اوجِ شعور پر ہی ہے

مرا بھروسہ فقط اسمِ نُور پر ہی ہے

 

سخن شناس ہوں ہرگز نہ کوئی شاعر ہوں

مرا مدار عطائے حضور پر ہی ہے

 

چمکتے چاند ستارے یہ کہکشاں یہ سحر

میرا خیال اسی ذکر نُور پر ہی ہے

 

ہماری آنکھ کا سرمہ ہے خاکِ پا ان کی

نظر ہماری سدا راہِ نُور پر ہی ہے

 

تری حدیث بصیرت فروغ ہے شاہا

بہشتِ گوش اسی اک سرُور پر ہی ہیں

 

خطا سرشت ہوں پھر بھی امید رہتی ہے

کہ لاج میری تو شاہِ نشور پر ہی ہے

 

گواہ طائرِ سدرہ تری بلندی پر

ترا نشانِ قدم عرش و طور پر ہی ہے

 

صفائے کوثر و تسنیم اور یہ زم زم

بہائے لمس زلالِ حضور پر ہی ہے

 

حلالِ عید چمکتا ہے اس طرح جیسے

نشان ، ناخنِ پائے حضور پر ہی ہے

 

ہوا ہے روح کا موسم جو آج پھر جل تھل

تری نگاہ کی برکھا سرُور پر ہی ہے

 

دیارِ نُور میں نوری کو بھی اجل آ جائے

مگر یہ لطف عطائے حضور پر ہی ہے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ