اردوئے معلیٰ

Search

فضلِ رب سے طیبہ آیا ، میں کہاں طیبہ کہاں

کرتا ہوں میں شکر رب کا ، مَیں کہاں طیبہ کہاں

 

یاالٰہی ! اِذن دے کعبہ سے طیبہ کا مجھے

بس یہی ہے اِک تمنا ، مَیں کہاں طیبہ کہاں

 

خانۂ کعبہ میں آکر دل ہُوا ہے باغ باغ

پھر وہ طیبہ یاد آیا ، مَیں کہاں طیبہ کہاں

 

خاتمہ بالخیر ہو طیبہ میں میرا اے خدا

آرزو ہے یہ خدایا ، مَیں کہاں طیبہ کہاں

 

یاالٰہی ! اِذن دے کعبہ سے طیبہ کا مجھے

بس یہی ہے اِک تمنا ، میں کہاں طیبہ کہاں

 

طوفِ کعبہ کر رہا تھا طاہرِؔ خستہ مگر

آ رہا تھا یاد بطحا ، مَیں کہاں طیبہ کہاں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ