اردوئے معلیٰ

فضلِ رب ہے جو کیا مجھ کو ثنا خواں تیرا

خادمِ ہیچ مداں اس پہ ہے نازاں تیرا

 

کوئی ہمسر نہیں اے خاصۂ خاصاں تیرا

مرتبہ ہے شبِ اسرا سے نمایاں تیرا

 

ماورا سرحدِ ادراک سے عظمت تیری

وصف کس سے ہو بیاں خواجۂ گیہاں تیرا

 

اپنے محبوب کی امت میں کیا ہے شامل

میرے رب مجھ پہ ہے دو گونہ یہ احساں تیرا

 

دامنِ دل میں سمیٹا ہے انہیں چن چن کر

مجھ کو ہر حرفِ سخن ہمسرِ مرجاں تیرا

 

یہ نہ ہوتا تو اندھیرا ہی اندھیرا ہوتا

دین و دنیا کا اجالا ہے یہ قرآں تیرا

 

اس کے پینے سے تو دنیا ہی بدل جاتی ہے

مرحبا جرعۂ پیمانۂ عرفاں تیرا

 

افقِ وقت پہ روشن ہے مثالِ خورشید

قابلِ دید ہے وہ عہدِ درخشاں تیرا

 

بات ہی اور ہے صدیقؓ کی تیرے، یوں تو

مرتضیٰؓ تیرا، عمرؓ تیرا، ہے عثماںؓ تیرا

 

حشر میں ایک نیا حشر نہ برپا ہو جائے

عام دیدار ہو جب اے شہِ خوباں تیرا

 

مانعِ راہِ مدینہ ہے خدا جانے کیوں

کیا برا ہم نے کیا گردشِ دوراں تیرا

 

شرط بس یہ ہے تو آ جائے نظرؔ محشر میں

کام میرا ہے پکڑ لوں گا میں داماں تیرا

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات