اردوئے معلیٰ

Search

فیضان کی بٹتی ہے خیرات مدینے میں

رحمت کی برستی ہے برسات مدینے میں

 

کھو جاتا ہے ہر زائر پُر کیف مناظر میں

قابو میں نہیں رہتے جذبات مدینے میں

 

خورشید بھی شرمائے طیبہ کے اجالے سے

انوار میں لپٹی ہے ہر رات مدینے میں

 

دُکھ درد کے ماروں پر آقا کی عطائیں ہیں

سکھ چین کی ملتی ہے سوغات مدینے میں

 

ہر ایک کی جھولی میں انمول خزانے ہیں

گنتی میں نہیں آتیں برکات مدینے میں

 

سر کار بلالیں گر اب ناز کو قدموں میں

بن جائے گی پھر اپنی ہر بات مدینے میں

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ