’’قبر میں لہرائیں گے تا حشر چشمے نوٗر کے‘‘

 

’’قبر میں لہرائیں گے تا حشر چشمے نوٗر کے‘‘

ظلمتِ مرقد میں روشن ہوں گے بُقعے نوٗر کے

زیرِ لب جاری رہے مدحت رسول اللہ کی

’’جلوہ فرما ہو گی جب طلعت رسول اللہ کی‘‘

 

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے
Share on facebook
Share on twitter
Share on whatsapp
Share on telegram
Share on email
لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے

متعلقہ اشاعتیں

وہ اک یتیم، بے کس وتنہا کہیں جسے
کہوں میں نعت تو لگتا ہے ایسے
محبت کیجئے ربّ العلیٰ سے
درِ شہ تک رسائی مل گئی ہے
بڑا احسان ہے مجھ پر خُدا کا
محبت یا خدا مجھ کو سکھا دے
محبت آپؐ کے دم سے اُخوت آپؐ کے دم سے
’’واہ کیا جوٗد و کرم ہے شہِ بطحا تیرا‘‘
’’رہے گا یوں ہی اُن کا چرچا رہے گا‘‘
’’کُن کا حاکم کر دیا اللہ نے سرکار کو‘‘