اردوئے معلیٰ

قتیلِ درد ہوا میں تو غمگسار آئے

رہی نہ جان سلامت تو جاں نثار آئے

 

تمہارا غم تھا میسر تو کوئی روگ نہ تھا

چلا گیا وہ مسیحا تو غم ہزار آئے

 

قبائے کذب و ریا اور کلاہِ نام و نمود
کہیں اُترنے سے پہلے ہی ہم اتار آئے

 

ہوئی نہ جرات طوفِ حریم عشق ہمیں

بس ایک سنگِ ملامت انا کو مار آئے

 

اک عرضِ شوق بصد حسرتِ دلِ ناکام

حضورِ ناز میں پہنچے تو پھر گزار آئے

 

متاعِ فکر و نظر، ثروتِ خیال و خواب

خزانے جتنے میسر تھے اُن پہ وار آئے

 

ہزار اشکِ محبت بہم ہیں آنکھوں میں

کہاں سے شیشۂ دل پر کوئی غبار آئے

 

وصالِ یار حقیقت ہے گر تو ختم نہ ہو

اگر یہ خواب ہے کوئی تو بار بار آئے

 

ذرا سی دولتِ دل تھی ظہیؔر اُسکو بھی

قمار خانۂ الفت میں جا کے ہار آئے

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات