اردوئے معلیٰ

قریۂ سیم و زر و نام و نسب یاد آیا

پھر مجھے ترکِ تعلق کا سبب یاد آیا

 

ہجر میں بھول گئے یہ بھی کہ بچھڑے تھے کبھی

دور وہ دل سے ہوا کب، ہمیں کب یاد آیا

 

کارِ بیکار جسے یاد کہا جاتا ہے

بات بے بات یہی کارِ عجب یاد آیا

 

ق

 

پارۂ ابر ہٹا سینۂ مہتاب سے جب

عشوۂ ناز سرِ خلوتِ شب یاد آیا

 

عارضِ شب ہوئے گلنار، صبا شرمائی

جب ترا غمزۂ غمازِ طلب یاد آیا

 

پھر مری توبۂ لرزاں پہ قیامت گزری

پھر مجھے رقصِ شبِ بنتِ عنب یاد آیا

 

یاد آئے ترے کم ظرف بہکنے والے

جامِ کم کیف بصد شور و شغب یاد آیا

 

چاندنی، جھیل، ہوا، زلفِ پریشاں، بادل

دل و جاں ہم نے کہاں کھوئے تھے اب یاد آیا

 

کیا لکھے کوئی بجز نوحۂ قرطاس کہ حیف

بے ادب خامۂ ارزاں کو ادب یاد آیا

یہ نگارش اپنے دوست احباب سے شریک کیجیے

اشتہارات

لُطفِ سُخن کچھ اس سے زیادہ

اردوئے معلیٰ

پر

خوش آمدید!

گوشے۔۔۔

حالیہ اشاعتیں

اشتہارات

اشتہارات